Girls & Boys Attitude Poetry In Urdu (2022)

Here you read Girl’s and Boys’s attitude poetry in Urdu, and you can also see attitude poetry on WhatsApp status, swag and Facebook. Having an attitude is a good thing, but misusing this attitude can also make you lose your self-esteem and also over; attitude. I think a person should adopt the same attitude as the person they are talking to.

If his attitude towards you is Bad, then you don’t want to listen quietly; If you continue to listen, he will consider you weak. He will always talk to you in the same tone, which will give you a lot of pain. That’s why you should talk to me in the same tone as the one Who is talking to you.

Girls Attitude Poetry

Poetry about the attitude of a girl Depicts the feelings and the thinking of an individual. It reveals the other’s thoughts, perceptions, sentiments, relationships, and more. To deal with society and to satisfy the criteria, girls and boys must have the best attitude.

Attitude poetry for girls will undoubtedly help you and boost your self-confidence. Here you read and share all types of attitude poetry for girls in Urdu and shared it on various social platforms like Pinterest, Facebook, WhatsApp, and Instagram twitter. Also, check attitude poetry in Urdu.

girls attitude poetry

اپنی نظر میں بہت اچھی ہوں میں”
“دنیا کی نظر کا ٹھیکہ نہیں لے رکھا میں نے

Apni Nazar Mein Bohat Achi Hon Mein
Duniya Ki Nazar Ka Thaika Nahi Le Rakha Mein Ne

خوش رہتی ہوں۔ ان لوگوں کے سامنے”
“جن کے خون جلتے ہے ہمارے نام سے

Khush Rehti Hon. Un Logon Ke Samnay
Jin Ke Khoon Jaltay Hai Hamaray Naam Se

میرے جینے کا طریقہ تھوڑا الگ ہے صاحب”
“میں امید پہ نہیں، اپنی ضد پر جیتی ہوں

Mere Jeeney Ka Tareeqa Thora Allag Hai Sahib
Mein Umeed Pay Nahi, Apni Zid Par Jeeti Hon

میں صرف اس بات کی ذمہ دار ہوں جو میں نے بولی”
“اس بات کی نہیں جو آپ نے سمجھی

Mein Sirf Is Baat Ki Zimma Daar Hon Jo Mein Ne Boli
Is Baat Ki Nahi Jo Aap Ne Samjhi

ہم حد میں رہنا پسند کرتے ہے”
“اور لوگوں کو یہ غرور لگتا ہے

Hum Had Mein Rehna Pasand Karte Hai
Aur Logon Ko Yeh Ghuroor Lagta Hai

آئینہ خود بھی سنورتا ہے ہماری خاطر”
“جب ہم اس کے سامنے تیار ہوا کرتے ہیں

Aaina Khud Bhi Sanwerta Hai Hamari Khatir
Jab Hum Is Ke Samnay Tayyar Sun-Hwa Karte Hain

خود کا مقابلہ کبھی کسی سے کیا نہیں”
“جیسی بھی ہوں بہت بہترین ہوں میں

Khud Ka Muqaabla Kabhi Kisi Se Kya Nahi
Jaisi Bhi Hon Bohat Behtareen Hon Mein

نہیں ہوں میں قائل کسی کی بھی بات کی”
“میرا اپنا اصول، اپنی انا، اپنا مزاج ، اپنا انداز

Nahi Hon Mein Qaail Kisi Ki Bhi Baat Ki
Mera Apna Usool, Apni Anaa, Apna Mizaaj, Apna Andaaz

ساری دنیا ہمیں چھوڑ دے ہمارا جاتا کچھ نہیں”
“مگر جس کو ہم چھوڑ دیں اس کا رہتا کچھ نہیں

Saari Duniya Hamein Chore Day Hamara Jata Kuch Nahi
Magar Jis Ko Hum Chore Den Is Ka Rehta Kuch Nahi

اتنا بھی قیمتی نا بناؤ اپنے آپ کو ہم”
“غریب لوگ ہے مہنگی چیز چھوڑ دیا کرتے ہے

Itna Bhi Qeemti Na Banaao Apne Aap Ko Hum
Ghareeb Log Hai Mehngi Cheez Chore Diya Karte Hai

Boys Attitude Poetry

Attitude poetry for boys to show their love and hate for each other and society. Are looking for new and impressive attitude poetry to share on your status on Facebook and Instagram? Then you are at the place because we are offering the latest collection of attitude poetry for boys, Facebook, WhatsApp Status, and amazing pics depicting high-level arrogance and style. These two lines of poetry are in Urdu font. click here.

attitude poetry for boys

رشتے بچانے کے لئے میں اکثر جکتا رہا”
“بے وقوف لوگ اسے میری اوقات سمجھنے لگے

Rishte Bachanay Ke Liye Mein Aksar Jukta Raha
Be Waqoof Log Usay Meri Auqaat Samajhney Lagey

بڑی شدت سے آزماتے ہو صبر میرا”
“کبھی جو خود پے بیتی تو بکھر جاو گے

Barri Shiddat Se Azmatay Ho Sabr Mera
Kabhi Jo Khud Pay Beete To Bikhar Jao Ge

دشمنوں کی بھیڑ میں راستہ بنا کے چلتا ہوں”
“یاروں کا یار ہوں میں سر اٹھا کے چلتا ہوں

Dushmanon Ki Bheer Mein Rasta Bana Ke Chalta Hon
Yaaron Ka Yaar Hon Mein Sir Utha Ke Chalta Hon

میں اپنی بات کی تجھ کو دلیل دوں گا”
“مگر زبان کاٹ کے رکھ دوں گا بات کائی تو

Mein Apni Baat Ki Tujh Ko Daleel Dun Ga
Magar Zabaan Kaat Ke Rakh Dun Ga Baat Kaiti To

منافقت سے جب تھک جاؤ تو سامنا کرنا صاحب”

“ہمارا دل بھی بڑا ہے_ اور _ ہماری پہچان بھی

Munafqat Se Jab Thak Jao To Saamna Karna “Sahib”
Hamara Dil Bhi Bara Hai _ Aur _ Hamari Pehchan Bhi

وہ جو تہمت لگاتے ہیں مجھ پر”
“میرے صبر کی مار کھائیں گے

Woh Jo Tohmat Lagatay Hain Mujh Par
Mere Sabr Ki Maar Khayen Ge

عزت کرنے سے عزت ملے گی”
“ٹھکراؤ گے تو ٹھکرا دیئے جاؤ گے

Izzat Karne Se Izzat Miley Gi
Thukrao Ge To Thukra Diye Jao Ge

وقت وقت کی بات ہے آج تیرا ہے، کل میرا ہو گا”

“اور جب میرا ہو گا !! تو سوچ تیرا کیا ہو گا

Waqt Waqt Ki Baat Hai Aaj Tera Hai, Kal Mera Ho Ga
Aur Jab Mera Ho Ga!! To Soch Tera Kya Ho Ga

تھوڑا بہت زہر تو چیونٹی میں بھی ہوتا ہے”
“پھر میں تولڑکا ہوں، لڑکا بھی اچھا خاصا

Waqt Waqt Ki Baat Hai Aaj Tera Hai, Kal Mera Ho Ga
Aur Jab Mera Ho Ga!! To Soch Tera Kya Ho Ga

میرے خلاف کئی لوگ باتیں کرتے ہیں”
“مگر ملیں تو بڑا احترام کرتے ہیں

Mere Khilaaf Kayi Log Baatein Karte Hain
Magar Milein To Bara Ehtram Karte Hain

Attitude Poetry Facebook

Here you can copy and paste on Facebook status. I collect some best attitude poetry for Facebook stories; statuses hope you like them. If you Like it, Please do comment below for review and to motivate us.

نکلے وہ لوگ میری شخصیت بگاڑنے”
“کردار جن کے خود مرمت مانگ رہے ہے

Niklay Woh Log Meri Shakhsiyat Bigaarnay
Kirdaar Jin Ke Khud Murammat Maang Rahay Hai

ہارا کر کوئی جان بھی لے لے تو منظور ہے مجھکو”
“دھوکا دینے والوں کو میں پھر موقع نہیں دیتا

Haara Kar Koi Jaan Bhi Le Le To Manzoor Hai Mujhkoo
Dhoka Dainay Walon Ko Mein Phir Mauqa Nahi Deta

دیکھ لی ہم نے زمانے بھر کی یاری”
“برا وقت کیا آیا، چھوڑ گئے سب باری باری

Dekh Li Hum Ne Zamane Bhar Ki Yaari
Bura Waqt Kya Aaya, Chore Gaye Sab Baari Baari

صحیح وقت پر کروا دیں گے حدوں کا احساس”
“تالاب خود کو سمندر سمجھ بیٹھے ہیں

Sahih Waqt Par Karwa Den Ge Hado Ka Ehsas
Talaab Khud Ko Samandar Samajh Baithy Hain

ہماری آنکھیں اگر شعر بنانے لگ جائیں”

 “تم جو غزلیں لئے پھرتے ہو ٹھکانے لگ جائیں

Hamari Ankhen Agar Shair Bananay Lag Jayen
Tum Jo Gazleen Liye Phirtay Ho Thikaane Lag Jayen

اب آواز بھی دو گے تو نہیں آئیں گے”
“ٹوٹنے والے قیامت کی انا رکھتے ہیں

Ab Aawaz Bhi Do Ge To Nahi Ayen Ge
Totnay Walay Qayamat Ki Anaa Rakhtay Hain

اپنے دل سے نکالو تو مانوں تم کو”
“یوں چھوڑ کر جانا کوئی کمال نہیں

Apne Dil Se Nikalu To Manoo Tum Ko
Yun Chore Kar Jana Koi Kamaal Nahi

ایک اسی اصول پر گزاری ہے زندگی میں نے”
“جس کو اپنا مانا اسے کبھی پر کھا نہیں

Aik Isi Usool Par Guzari Hai Zindagi Mein Ne
Jis Ko Apna Mana Usay Kabhi Par Kha Nahi

Attitude Poetry WhatsApp Status

Nowadays, many people resort to WhatsApp status to express their heart to someone, and whether it is bitter or true, they put the Status on what they cannot say to their relatives. You can also pick some top attitude poetry for WhatsApp status.

WhatsApp attitude poetry

آنا پرست ہوں میں ٹوٹ جاوں گا لیکن”
“تمہیں کبھی نہ کہوں گا، کہ یاد آتے ہو

Aana Parast Hon Mein Toot Jaun Ga Lekin
Tumhe Kabhi Nah Kahoon Ga, Ke Yaad Atay Ho

ہمیں شاعر سمجھ کے یوں نظر انداز مت کر”
“نظر ہم پھیر لیں تو حسن کا بازار گر جائیگا

Hamein Shayar Samajh Ke Yun Nazar Andaaz Mat Kar
Nazar Hum Phair Len To Husn Ka Bazaar Gir Jaayegaa

ہزاروں غم ہیں لیکن آنکھ سے ٹپکا نہیں آنسو”
“ہم اہل ظرف ہیں پیتے ہیں چھلکا یا نہیں کرتے

Hazaron Gham Hain Lekin Aankh Se Tapka Nahi Ansoo
Hum Ahal Zarf Hain Peetay Hain Chilka Ya Nahi Karte

فرق بہت ہے تمہاری اور ہماری تعلیم میں”
“تم نے استادوں سے سیکھا ہے اور ہم نے حالاتوں سے

Farq Bohat Hai Tumhari Aur Hamari Taleem Mein
Tum Ne Ustadon Se Seekha Hai Aur Hum Ne Halatoo Se

وقت کے ایک طمانچے کی دیر ہے”
صاحب
“میری فقیری کیا، تیری بادشاہی کیا

Waqt Ke Aik Tmanche Ki Der Hai
Sahib
Meri Faqeeri Kya, Teri Badshahi Kya

میری تعریف کرے یا مجھے بدنام کرے”
“جس نے جو بات بھی کر نی سر عام کرے

Meri Tareef Kere Ya Mujhe Badnaam Kere
Jis Ne Jo Baat Bhi Kar Ni Sir Aam Kere

تم نے کیا چھوڑنا تھا مجھے”
“تیری اوقات ہی نہیں بھی مجھے پائے کی

Tum Ne Kya Chhorna Tha Mujhe
Teri Auqaat Hi Nahi Bhi Mujhe Pane Ki

ہم جیسے نہیں ہو سکتے آپ”
“ہمارے انداز چرا لینے سے

Hum Jaisay Nahi Ho Satke Aap
Hamaray Andaaz Chura Lainay Se

نواب زادی ہوں میری اپنی پہچان ہے سر کار”
“لوگ ملتے ہی مرید ہو جاتے ہیں

Nawab Zadi Hon Meri Apni Pehchan Hai Sir Car
Log Mlitay Hi Mureed Ho Jatay Hain

ایک سن سکتی ہوں تو چار سنا بھی سکتی ہوں”
“احترام کرتی ہوں مگر خوب انا رکھتی ہوں

Aik Sun Sakti Hon To Chaar Suna Bhi Sakti Hon
Ehtram Karti Hon Magar Khoob Anaa Rakhti Hon

میں دیکھنے میں عام سی لڑکی ہوں”
“مگر یقین جانئیے سکون چھین لیتی ہوں لوگوں کا

Mein Dekhnay Mein Aam Si Larki Hon
Magar Yaqeen Janiye Sukoon Chean Layte Hon Logon Ka

Conclusion

Thank you for visiting this post. Friends, I hope you like girls and boys attitude poetry. If you have any questions or suggestions in your mind, then you must write to us in the comment box.

Leave a Comment