Sad Poetry Mirza Ghalib (2022) – heart touching

Mirza Ghalib is a famous Urdu poet known all over the world. He was born on December 27, 1797. Mirza Ghalib is considered a famous poet not only in Urdu but also in Persian. The Persian collection of Mirza Ghalib posh as “Kuliyat-e-Ghalib Farsi” is popular not only in Pakistan but in Iran as well.  He has written poetry on almost all the situations of life and love.

Today, he stays one of the maximum famous and influential masters of the Urdu language; he’s regarded genuinely as Ghalib. Here you can read the famous and best poetry collection of Mirza Ghalib.

Sad Poetry Mirza Ghalib

You can also copy and paste poetry from Mirza Ghalib In Urdu, 2 lines, About love, Hindi, and Roman Urdu. Poetry is the best way to describe your emotions. I hope you enjoyed my collection, If you did this then share it with your friends. Give your feedback in the comment section below the post.

Sad Poetry Mirza Ghalib

عمر بھر ہم یوں ہی غلطی کرتے رہے غالب”
“دھول چہرے پہ تھی اور ہم آئینہ صاف کرتے رہے

Umar bhar hum yun hi ghalti karte rahay ghalib
dhool chehray pay thi aur hum aaina saaf karte rahay

دفن کرنے سے پہلے میرادل نکال لینا غالب”
“کہیں خاک میں نہ مل جائیں میرے دل میں رہنے والے

Dafan Karne Se Pehlay Miradl Nikaal Lena Ghalib
Kahin Khaak Mein Nah Mil Jayen Mere Dil Mein Rehne Walay

بے وجہ نہیں روتا عشق میں کوئی غالب”
“جسے خود سے بڑھ کے چاہو وہ رلاتا ضرور ہے

Be Wajah Nahi Rota Ishhq Mein Koi Ghalib
Jisay Khud Se Barh Ke Chaho Woh Rulaata Zaroor Hai

غالب وہ دن گئے اب حماقت کون کرتا ہے”
“وہ کیا کہتے ہیں اسکو ہاں۔۔محبت۔۔ محبت کون کرتا ہے

Ghalib Woh Din Gaye Ab Hamaqat Kon Karta Hai
Woh Kya Kehte Hain Usko Haan Mohabbat Mohabbat Kon Karta Hai

عشق پر زور نہیں ہے یہ وہ آتش غالب”
“کہ لگاۓ نہ لگے، اور بجھائے نہ بجھے

Ishhq Par Zor Nahi Hai Yeh Woh Aatish Ghalib
Ke Lagaye Nah Lagey, Aur Bujhaye Nah Bujhe

صحرا کو بڑا اعالم ہے اپنی تنہائی پر غالب”
“اس نے دیکھانہیں عالم میری تنہائی کا

Sehraa Ko Bara Aalam Hai Apni Tanhai Par Ghalib
Is Ne Dekha Nahi Aalam Meri Tanhai Ka

آئینہ کیوں نہ دوں کہ تماشا کہیں جسے”
“ایسا کہاں سے لاؤں کہ تجھ سا کہیں جسے

Aaina Kyun Nah Dun Ke Tamasha Kahin Jisay
Aisa Kahan Se Lau Ke Tujh Sa Kahin Jisay

دل کو ہم صرف وفا سمجھے، تھے کیا معلوم تھا”
“یعنی یہ پہلے ہی نذر امتحاں ہو جائے گا

Dil Ko Hum Sirf Wafa Samjhay, Thay Kya Maloom Tha
Yani Yeh Pehlay Hi Nazar Imteha Ho Jaye Ga

Urdu Sad Poetry Mirza Ghalib

You will find all kinds of poetry on our websites such as Urdu, Hindi, English, Love, Broken heart, 2 lines, lonely, Bewafa, Mirza Ghalib, and Friendship.

Urdu sad poetry Mirza Ghalib

جب جینے کا شوق تھا تو دتمن ہزار تھے”
“اب مرنا چاہتا ہوں تو قاتل نہیں ملتا

Jab Jeeney Ka Shoq Tha To Dushman Hazaar Thay
Ab Marna Chahta Hon To Qaatil Nahi Milta

ہوئی مدت کہ غالب مرگیا پر یاد آتا ہے”
“وہ ہر اک بات پر کہنا کہ یوں ہوتا تو کیا ہوتا

Hui Muddat Ke Ghalib Margaya Par Yaad Aata Hai
Woh Har Ik Baat Par Kehna Ke Yun Hota To Kya Hota

عرض نیاز عشق کے قابل نہیں رہا”
“جس دل پہ ناز تھا مجھے وہ دل نہیں رہا

Arz Niaz Ishhq Ke Qabil Nahi Raha
Jis Dil Pay Naz Tha Mujhe Woh Dil Nahi Raha

وہ مجھ سے بچھڑ کر اب تک رویا نہیں غالب”
“کوئی تو ہمد رد ہے جو اسے رونے نہیں دیتا

Woh Mujh Se Bhichar Kar Ab Tak Roya Nahi Ghalib
Koi To Hamdard Hai Jo Usay Ronay Nahi Deta

ملے وہ شخص تو اسے اتناکہ دینا، غالب”
“کہ کوئی ہر وقت تمہاری راہیں تکتا ہے

Miley Woh Shakhs To Usay Itna Keh Dena, Ghalib
Ke Koi Har Waqt Tumhari Rahein Taktaa Hai

قطع کیجیے نہ تعلق ہم سے”
“کچھ نہیں ہے، تو عداوت ہی سہی

Qata Kiijiye Nah Talluq Hum Se
Kuch Nahi Hai, To Adawat Hi Sahi

اس کی سادگی پہ کون نہ مر جائے اے خُدا”
“لڑتے ہیں اور ہاتھ میں تلوار بھی نہ

Us Ki Saadgi Pay Kon Nah Mar Jaye Ae Khuda
Lartay Hain Aur Haath Mein Talwar Bhi Nahi

درد ہو دل میں تو دوا کیجے”
“دل ہی جب درد ہو تو کیا کیجے

Dard Ho Dil Mein To Dawa Kije
Dil Hi Jab Dard Ho To Kya Kije

Mirza Ghalib Poetry In Urdu 2 Lines

You may also copy and paste poetry by Mirza Ghalib in Hindi, Roman Urdu, and Urdu with two lines about love. The simplest method to express your emotions is via poetry. I sincerely hope you liked my selection; if so, please tell your friends about it. Comment on this post with your thoughts in the space provided below.

Mirza Ghalib Poetry In Urdu 2 lines

دکھ دے کر سوال کرتے ہو”
“تم بھی غالب کمال کرتے ہو

Dukh Day Kar Sawal Karte Ho
Tum Bhi Ghalib Kamaal Karte Ho

غالب نہ کر حضور میں تو بار بار عرض”
“ظاہر ہے تیرا حال سب اُن پر کہے بغیر

Ghalib Nah Kar Huzoor Mein To Baar Baar Arz
Zahir Hai Tera Haal Sab Unn Par Kahe Baghair

ذرا کر زور سینے پر ،کہ تیر پر ستم نکلے”
“جو وہ نکلے ،تو دل نکلے ،جو دل نکلے تو دم نکلے

Zara Kar Zor Seenay Par, Ke Teer Par Sitam Niklay
Jo Woh Niklay, To Dil Niklay, Jo Dil Niklay To Dam Niklay

زندگی اپنی جب اس شکل سے گزری غالب”
“ہم بھی کیا یاد کریں گے کہ خدا رکھتے تھے

Zindagi Apni Jab Is Shakal Se Guzri Ghalib
Hum Bhi Kya Yaad Karen Ge Ke Kkhuda Rakhtay Thay

میں نے چاہا تھا کہ اند وہ وفا سے چھوٹوں”
“وہ ستمگر مرے مرنے پہ بھی راضی نہ ہوا

Mein Ne Chaha Tha Ke And Woh Wafa Se Choton
Woh Sitamghar Marey Marnay Pay Bhi Raazi Nah Sun-Hwa

قاصد کے آتے آتے خط اک اور لکھ رکھوں”
“میں جانتا ہوں جو وہ لکھیں گئے جواب میں

Qasid Ke Atay Atay Khat Ik Aur Likh Rakhon
Mein Jaanta Hon Jo Woh Likhain Gaye Jawab Mein

محبت میں نہیں ہے فرق جینے اور مرنے کا”
“اسی کو دیکھ کر جیتے ہیں جس کافر پا دم نکلے

Mohabbat Mein Nahi Hai Farq Jeeney Aur Marnay Ka
Isi Ko Dekh Kar Jeetay Hain Jis Kafir Pa Dam Niklay

ھم نے تو خاک نشين هو جانا ہے”
“تم ہی نے پھر ڈھونڈتے رہ جانا ھے

Hm Ne To Khaak Nasheen Ho Jana Hai
Tum Hi Ne Phir Dhoondtay Reh Jana He

Sad Poetry Mirza Ghalib In Urdu Love

You can find the latest and heart touching sad poetry Mirza Ghalib in this post.

ہم کو ان سے وفا کی امید”
“جو نہیں جانتے وفا کیا ہے

Hum Ko Un Se Wafa Ki Umeed
Jo Nahi Jantay Wafa Kya Hai

ذرا کر زور سینے پر ،کہ تیر پر ستم نکلے”
“جو وہ نکلے ،تو دل نکلے ،جو دل نکلے تو دم نکلے

Zara Kar Zor Seenay Par, Ke Teer Par Sitam Niklay
Jo Woh Niklay, To Dil Niklay, Jo Dil Niklay To Dam Niklay

مصروف رہنے کا انداز تمہیں تنہا نہ کردے غالب”
“رشتے فرصت کے نہیں توجوں کے محتاج ہوتے ہیں

Masroof Rehne Ka Andaaz Tumhe Tenha Na Kr Dy Ghalib
Rishty Fursat Ke Nahi Tawajoo Ke Muhtaaj Hote Hai

عشق پر زور نہیں ہے یہ وہ آتش غالب”
“کہ لگائے نہ لگے، اور بجھائے نہ بجھے

Ishq par zor nahin, hai yeh voh aatish Ghalib
Ke lagaey na lagey aur bujhaey na bane.

دل میں ذوق وصل و یاد یار تک باقی نہیں”
“آگ اس گھر میں لگی ایسی کہ جو تھا جل گیا

Dil Mein Zouq Wasal O Yaad Yaar Tak Baqi Nahi
Aag Is Ghar Mein Lagi Aisi Ke Jo Tha Jal Gaya

عشرتِ قطرہ ہے دریا میں فنا ہوجانا”
“درد کا حد سے گزرنا ہے دوا ہوجانا

Ishrat Qatra Hai Darya Mein Fanaa Hojana
Dard Ka Had Se Guzarna Hai Dawa Hojanaa

رگوں میں دوڑتے پھرنے کے ہم نہیں قائل”
“جب آنکھ سے ہی نہ ٹپکا تو پھر لہو کیا ہے

Ragon Mein Dorrtay Phirnay Ke Hum Nahi Qaail
Jab Aankh Se Hi Nah Tapka To Phir Lahoo Kya Hai

نہ بزم اپنی، نہ ساقی اپنا نہ شیشہ اپنا، نہ جام اپنا”
“اگر یہی ہے نظام ہستی تو غالب زندگی کو سلام اپنا

Nah Bazm Apni, Nah Saqi Apna Nah Sheesha Apna, Nah Jaam Apna
Agar Yahi Hai Nizaam Hasti To Ghalib Zindagi Ko Salam Apna

Also read: Nature Poetry

Conclusion

Thank you for visiting this post. Friends, I hope you like sad poetry by Mirza Ghalib poetry. If you have any questions or suggestions in your mind, then you must write to us in the comment box.

Leave a Comment