Top Wasi Shah Sad Poetry (2022)

Here you read Wasi Shah sad poetry in Urdu. In the days before the internet, Pakistani poet Wasi Shah was well-known. He is a prominent young poet from Pakistan. In 1975, he was born in Pakistan. He wrote a lot of poetry. The poetic works of Wasi Shah (Shayari) encourage readers to express themselves. Ghazals and the poetry of Wasi Shah are well-known among poetry lovers.

In a few years, he has given a lot to Urdu poetry. Wasi Shah mainly focuses on love, romantic and sad Urdu, and here you see poetry in sad Urdu, two lines of poetry, SMS, and Also some images of Wasi Shah with poetry. Wasi Shah is one of my favorite poets. People search for Wasi Shah Poetry or Wasi poetry. I can’t wait to publish the Wasi Shah poetry.

Wasi Shah Sad Poetry

Wasi Shah is a well-known name in Pakistani literature. His poetry is famous, and he is also the author of several well-liked tragedies. Wasi contributes pieces to Urdu Point and the top newspaper in the nation. Shah usually has columns published in “Naye Baat Lahore.” He is not only a poet but also a journalist. He holds a unique position, which is particularly well-liked by young people.

wasi shah sad poetry

اس جدائی میں تم اندر سے بکھر جاؤ گے”
“کسی معذور کو دیکھو گے تو یاد آؤں گا

Is Judai Mein Tum Andar Se Bikhar Jao Ge
Kisi Mazoor Ko Dekho Ge To Yaad Aon Ga

لوگوں کے چہرے پر مت جانا”
“چہرے سے بڑا کوئی نقاب نہیں

Logon Ke Chehray Par Mat Jana
Chehray Se Bara Koi Naqaab Nahi

ہم سے زندگی کی حقیقت نہ پوچھو وصی”
“بہت پر خلوص لوگ تھے جو تنہا کر گئے

Hum Se Zindagi Ki Haqeeqat Nah Pucho Wasii
Bohat Par Khuloos Log Thay Jo Tanha Kar Gaye

تیرے کوچے سے اب میرا تعلق واجبی سا ہے”
“مگر جب بھی گزرتا ہوں آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

Tairay Koochy Se Ab Mera Talluq Wajibi Sa Hai
Magar Jab Bhi Guzarta Hon Ankhen Bhiig Jati Hain

ہزاروں موسموں کی حکمرانی ہے مرے دل پر وصی”
“میں جب بھی ہنستا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

Hazaron Mousamoo Ki Hukmarani Hai Marey Dil Par Wasii
Mein Jab Bhi Hanstaa Hon To Ankhen Bhiig Jati Hain

سب ہی تعریف کرتے ہیں میری تحریروں کی”
“کبھی کوئی نہیں سنتا میرے لفظوں کی سسکیاں

sab hi tareef karte hain meri tahreeron ki
kabhi koi nahi santa mere lafzon ki shiskiyan

ترس آتا ہے مجھے اپنی معصوم سی پلکوں پر”
“جب بھیک کر کہتی ہیں اب رویا نہیں جاتا

Taras Aata Hai Mujhe Apni Masoom Si Palkon Par
Jab Bheek Kr Kehti Hain Ab Roya Nahi Jata

کہاں تلاش کروگے، تم مجھ جیسا شخص”
“جو تمہارے ستم بھی سہے اور تم سے محبت بھی کرے

Kahan Talaash Karogay, Tum Mujh Jaisa Shakhs
Jo Tumahray Sitam Bhi Sahy Aur Tum Se Mohabbat Bhi Kere

میرے چہرے سے میرا درد نہ پڑھ پاؤ گے وصی”
“میری عادت ہے ہر بات پر مسکرادینا۔

Mere Chehray Se Mera Dard Nah Parh Pao Ge Wasii
Meri Aadat Hai Har Baat Par Muskara Dena

Wasi Shah Sad Poetry In Urdu

I sincerely hope you like this collection of Wasi Shah’s sorrowful poetry in Urdu. Please spread the word among your contacts and on other social networking sites as well, since your sharing will help us continue to improve our material.

wasi shah sad poetry in urdu

میں قابل نفرت ہوں تو چھوڑ دے مجھ کو وصی”
“تو مجھ سے یوں دکھاوے کی محبت نہ کیا کر

Mein Qabil Nafrat Hon To Chore Day Mujh Ko Wasii
To Mujh Se Yun Dikhavay Ki Mohabbat Nah Kya Kar

یہ اند ھیرے تو سمٹ جائیں گے اک دن اے دوست”
“یاد آۓ گا تجھے مجھ سے گریزاں ہونا

Yeh And Andhere To Simat Jayen Ge Ik Din Ae Dost
Yaad Aye Ga Tujhe Mujh Se Gorezan Hona

خوب رکھا ہے رفاقت کا بھرم اس نے وصی”
“کٹ چکے ہاتھ تو پھر ہاتھ ملانے آئے

Khoob Rakha Hai Rafaqat Ka Bharam Us Ne Wasi
Kat Chuke Haath To Phir Haath Milaane Aaye

جگر ھو جائے گا چھلنی یہ آنکھیں خون روئیں گی”
“وصی بے فیض لوگوں سے نبھا کر کچھ نہیں ملتا

Jigar Ho Jaye Ga Chhalni Yeh Ankhen Khoon Royain Gi
Wasii Be Faiz Logon Se Nibha Kar Kuch Nahi Milta

ہر طرف تیرا ہی عکسں نظر آۓ گا”
“میری آنکھوں میں پیار سے دیکھ کبھی

Har Taraf Tera Hi Aks Nazar Aaye Ga
Meri Aankhon Mein Pyar Se Dekh Kabhi

اداسیوں سے وابستہ ہے یہ زندگی میری وصی”
“خدا گواہ ہے کے پھر بھی تجھے یاد کرتے میں

Udasiyoon Se Wabasta Hai Yeh Zindagi Meri Wasii
Khuda Gawah Hai Ke Phir Bhi Tujhe Yaad Karte Mein

شاید وہ میرے حال پہ بے ساختہ رو دے”
“اس بار بہاروں سے مرا ذکر نہ کرنا

Shayad Woh Mere Haal Pay Be Sakhta Ro Day
Is Baar Baharon Se Mra Zikar Nah Karna

Wasi Shah Sad Poetry 2 Lines

Two lines of poetry are the best way to understand the feeling of another individual. I also can easily understand the poetry of two lines. Here you read my favorite poet of top collection poetry 2022.

تمہارا نام لکھنے کی اجازت چھن گئی جب سے”
“کوئی بھی لفظ لکھتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

Tumhara Naam Likhnay Ki Ijazat Chhin Gayi Jab Se
Koi Bhi Lafz Likhta Hon To Ankhen Bhiig Jati Hain

کرنے ہیں اگر شکوے محبوب سے وصی”
“پھر چھوڑ دے محبت کوئی اور کام کر

Karne Hain Agar Shikway Mehboob Se Wasii
Phir Chore Day Mohabbat Koi Aur Kaam Kar

کسی کی آنکھ سے سینے چرا کر کچھ نہیں ملتا”
“منڈیروں سے چراغوں کو بجھا کر کچھ نہیں ملتا

Kisi Ki Aankh Se Sepnay Chura Kar Kuch Nahi Milta
Mandiro Se Charaghoon Ko Bujha Kar Kuch Nahi Milta

جان سے مار دے مجھے لیکن”
“چھوڑ جانے کا مجھ پہ ظلم نہ کر

Jaan Se Maar Day Mujhe Lekin
Chore Jane Ka Mujh Pay Zulm Nah Kar

کب بھُلائے جاتے ہیں دوست جُدا ہو کر بھی وصی”
“دل ٹوٹ تو جاتا ہے ، رہتا پھر بھی سینے میں ہے

Kab Bhulae Jatay Hain Dost Juda Ho Kar Bhi Wasii
Dil Toot To Jata Hai, Rehta Phir Bhi Seenay Mein Hai

دل کو کس بات کی سزا ہے وصی”
“موت تک کیوں اسے دھڑکنا ہے

dil ko kis baat ki saza hai wasii
mout tak kyun usay dharakna hai

سمندر میں اترتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں”
“تری آنکھوں کو پڑھتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

Samandar Mein Utartaa Hon To Ankhen Bhiig Jati Hain
Teri Aankhon Ko Parhta Hon To Ankhen Bhiig Jati Hain

کچھ اس لیے بھی تو بے حال ہو گئے ہم لوگ”
“تمہاری یاد کا بے حد خیال رکھتے ہیں

Kuch Is Liye Bhi To Be Haal Ho Gaye Hum Log
Tumhari Yaad Ka Be Had Khayaal Rakhtay Hain

Wasi Shah Sad Poetry SMS

Dard SMS Wasi Shah in urdu 2022. Best wasi shah poetry SMS 2 lines. Easily share on different social media like Facebook, Instagram, Twitter, Pinterest, and Youtube.

wasi shah sad poetry sms

ترے فراق کے لمحے شمار کرتے ہوۓ”
“بکھر چلے ہیں ترا انتظار کرتے ہوۓ

Tere Faraaq Ke Lamhay Shumaar Karte Huwy
Bikhar Chalay Hain Tera Intzaar Karte Huwy

سوچتا ہوں کے اسے نیند بھی آتی ہو گی”
“یا میری طرح فقط اشک بہاتی ہو گی

Sochta Hon Ke Usay Neend Bhi Aati Ho Gi
Ya Meri Terhan Faqat Asshk Bahati Ho Gi

تم میری آنکھ کے تیور نہ بھلا پاؤ گے”
“ان کہی بات سمجھو گے تو یاد آؤں گا

Tum Meri Aankh Ke Tevare Nah Bhala Pao Ge
Un Kahi Baat Samjhoo Ge To Yaad Aon Ga

وہ تیرا غم تھا کہ تاثیر میرے لہجے کی”
“کہ جس کو حال سناتے اسے رلا دیتے

Woh Tera Gham Tha Ke Taseer Mere Lehjey Ki
Ke Jis Ko Haal Sunaate Usay Rulaa Dete

تمھاری یاد نے کوئی جواب ہی نہ دیا”
“مرے خیال کے آنسو رہے صدا دیتے

Tumhari Yaad Ne Koi Jawab Hi Nah Diya
Marey Khayaal Ke Ansoo Rahay Sada Dete

تمہیں بھلانا ہی اول تو دسترس میں نہیں”
“جو اختیار بھی ہوتا تو کیا بھلا دیتے؟

Tumhe Bhulana Hi Awwal To Dustarus Mein Nahi
Jo Ikhtiyar Bhi Hota To Kya Bhala Dete

کچھ غیر ایسے ملے جو اپنا بنا گئے”
“کچھ اپنے ایسے ملے جو غیر کا مطلب بتا گئے

Kuch Ghair Aisay Miley Jo Apna Bana Gaye
Kuch Apne Aisay Miley Jo Ghair Ka Matlab Bta Gaye

Wasi Shah Sad Ghazals

Here you read some sad ghazals of Wasi Shah which fulfill with sadness and emotions. If you want more poetry on different writers and sad poetry click here.

wasi shah sad ghazals

اندھیری رات میں رہتے تو کتنا اچھا تھا
ہم اپنی ذات میں رہتے تو کتنا اچھا تھا
دکھوں نے بانٹ لیا ہے تمہارے بعد ہمیں
تمہارے ہاتھ میں رہے تو کتنا اچھا تھا

کون روتا ہے یہاں رات کے سناٹوں میں
میرے جیسا ھی کوئی ہجر کا مارا ہو گا۔
کام مشکل ہے مگر جیت ہی لوں گا اس کو
میرے مولا کا وصی جونہی اشاره ہوگا

میں کہتا رہ گیا ویسا نہیں ہوں
سمجھتا ہے مجھے جیسا، نہیں ہوں
میری تو گفتگو ہی روح سے ہے
میں تیرے جسم کا پیاسا نہیں ہوں
نہ مانی دل نے چلاتا رہا میں
نہیں ہوں یار میں ایسا نہیں ہوں
اسے اک بار پھر بتلا دے کوئی
وصی میں لوٹ کر آتا نہیں ہوں

یہ جو چہرے سے تمہیں لگتے ہیں بیمار ہے ہم
خوب روۓ ہیں لپٹ کر در و دیوار سے ہم
یار کی آنکھ میں نفرت نے ہمیں مار دیا
مرنے والے تھے کہاں یار کی تلوار سے ہم
عشق میں حکم عدولی بھی ہمیں آتی ہے
ٹلنے والے تو نہیں ہیں ترے انکار سے ہم
رنج ہر رنگ کے جھولی میں بھرے ہیں ہم نے
جب بھی گزرے ہیں کسی درد کے بازار سے ہم
بادشاه، شاعر و مجنوں سبھی آتے ہیں یہاں
لگ کے بیٹھے ہیں وصی شاہ کے دربار سے ہم

Leave a Comment